سفرِ منزل کس شب کو اختتام ہوا یاد نہیں،

تجھ سے ملاقات کا وہ خواب یاد نہیں،

منزل تک پہنچنے کے لیے جو اذیتیں ملیں،

اُن اذیتوں میں ملی لذت یاد نہیں،

سفر تنہا ہی کرنا تھا تیری جانب،

مگر رقیب اتنے ملے کہ یاد نہیں،

ہجر اختتام کے قریب تھا مگر پھر،

موڑ ایسا آیا کہ راستہ یاد نہیں،

وہ راستوں کی نا ہمواریاں تو ٹھیک،

پر تیری بے رُخی ایسی تھی کہ یاد نہیں،

وہ جسکو اریبہٓ میں سمجھی تھی ہمسفر،

وہ رہِ سفر میں کب چھوڑ گیا یاد نہیں۔

1
Leave a Reply

Leave a Reply

  Subscribe  
Notify of
farriah anjum
Guest
farriah anjum